Basir Sultan Kazmi (Pakistan / United Kingdom) was born in Pakistan where he studied and taught English at the Government College University Lahore. He came to the UK in 1990 and has taught at different levels. Four volumes of Basir’s Urdu poetry, a long play with English translation, and collected works Shajar Honay Tak have been published. Translations of his poetry have appeared in British magazines and anthologies and also as a book Passing Through. Basir’s plays have appeared at well known theatres of Liverpool and Manchester. He won a North West Playwrights Workshops Award in 1992. One of Basir’s couplets, with English translation, was carved in stone and installed at McKenzie Square Slough, UK in 2008. He has been a Royal Literary Fund Fellow and a Literature Adviser to the North West Arts Board. He has read widely almost all over the world. Basir has been awarded the MBE (2013) for Services to Literature as a Poet.


Stage or Book



I wrote my first poem at the age of eleven. Encouragement from my father Nasir Kazmi, who was a famous poet, and his friends kept motivating me. Since then I have been writing poetry regularly. At college, plays included in my syllabus, particularly by Shakespeare, Ibsen and Shaw, opened a new world before me. Fascinated by this form, I was inspired to write plays. I was a zealous sports lover as well and played chess, cricket and badminton. I found chess to be more than a game. The writer in me kept observing and responding to the world at large. In Pakistan, where I lived, the power politics, accumulation of wealth in a few hands, class struggle, corruption, exploitation, favouritism and discrimination against women, all seemed to be happening on a bigger chess board. Love, friendship and finding a suitable life-partner were, as always, the commonest themes of fiction that was being written at that time, and also of the films made and teleplays produced. The chess player and the writer in me joined hands to create something new. My first long play, Bisaat (The Chess Board) was the outcome.I decided to get my play published before being staged as I had always considered drama to be primarily a piece of reading. The political situation and the deplorable state of theatre in the country strengthened my decision. The television that was launched in 1964 had become the most popular means of entertainment. Almost all the resources available for arts were allocated to the only TV channel that existed and which was run and controlled by the government. The military dictatorship that had ruled the country since 1958 had enforced a strict censorship policy. Even the five years of democratic government, from 1972 to 1977, didn’t bring any improvement in the situation. Bisaat was published in 1987 with my introduction titled ‘Stage or Book’. In this brief foreword I explained and asserted why I preferred the book to the theatre. I was delighted and a bit surprised as well, to see that the book was very well received. Several favourable reviews appeared in national dailies and literary magazines. The idea of ‘the theatre of the mind’, which I’ll elaborate on later, was appreciated by many writers and people connected with performing arts.Even today I believe that drama is a piece of literature to be read like a poem, novel or story. As novels and stories can be converted into films; poems/songs can be sung; a play can be presented on stage or as a film. But this production will be a result of collaboration with other forms of art, such as music, acting and design. When a play is shown on TV or stage, the right to call it ‘My Play’ can be enjoyed as much by the director, producer and actors as by its author. I have heard a director saying, “What is the significance of a writer? What is a script? I can convert two lines into a two hour play.” The performers insist that people come to theatre or turn on TV to see ‘Them’. They can even do without any direction, set and music. They can please the audience by just moving about, looking at each other and smiling. There may not be any dialogue, they can count from one to hundred and hundred to one, and it won’t make any difference.These claims certainly depict a streak of extremism but they do have an element of truth. A play presented on stage or TV is neither the work of one artist nor the expression of one art. It’s a team work. Sometimes the director dominates, sometimes the actors overshadow; on occasions the writer proves his/her mettle and occasionally, all of them show their expertise.Therefore, like any other writer, the real test for a playwright is the book. There are innumerable people who have never been to a theatre but they not only discuss plays by notable dramatists but quote their dialogues in their day to day conversations like lines of poetry. They came in contact with these plays through books, although, they had lit the stage of their mind while reading. And this mind’s stage, in my opinion, is the real stage.It’ll be argued that every reader reads a book in their own way. So a hundred readers will read a book in hundred different ways and their understanding and interpretation of the book may entirely be different or even opposite to the writer’s intentions. Now, as compared with other writers, playwrights have the advantage of ‘showing’ their plays in the way they want people to see (understand) them. This is true to a great extent but it has been commonly observed that no two individuals coming out of a theatre have ‘seen’ the play in the same way. A theatre’s stage leaves a different impression on each individual. In other words, one hundred individuals are simultaneously viewing not one but a hundred different plays.Moreover, the writer and the director may do their best to keep close to the script; the difference between the actual presentation and the script will always be there. The individualities of the writer, director and actors have their own binding effects. When we’re reading a play in the book, our imagination can wander around without any restriction but in theatre, the individualities of performers rule out many possibilities. This becomes more evident in the presentation of historical or unique characters. Secondly, however realistic a theatre’s stage may be, the audience may be ‘lost’ to whatever extent, they never forget that whatever is going on in front of them is happening on the stage. So they have to light the stage of their mind and transfer the play to it and see. Therefore, a play is viewed in theatre as it is visualised while reading.It’ll also be said that the literal and ancient meaning of ‘drama’ is ‘to act and show’. But it’s strange that in those ancient times the element of ‘showing’ was the least important element in drama. The competition used to be among the dramatists and usually it was the dramatists who presented their plays on stage. The stage was like a platform and the performers appeared on it wearing masks and delivered dialogues as modern performance poets, who understand their poems well, perform their poetry. There was no curtain in front of the stage and the background was depicted by painted scenery, which wasn’t considered to be important. Aristotle, the most representative critic of that age, states:The spectacle, though an attraction, is the least artistic of all the parts, and has least to do with the art of poetry. The tragic effect is quite possible without a public performance and actors; and besides, the getting-up of the spectacle is more a matter for the costumier than the poet. In ancient drama, female characters were played by young boys instead of women. The sixteenth century Elizabethan theatre and the European theatre in the seventeenth century weren’t much different from the Greek theatre, although the art of drama had reached its peak. The plays of these times were staged innumerable times, and are frequently staged today, but they exist only in books. By all this, I don’t mean to say that I am a great dramatist or that I have written great plays; all I want to say is that I prefer to get my plays published just as I get my poems published in magazines and anthologies.






سٹیج یا کتاب

میں نے اپنی پہلی نظم گیارہ سال کی عمر میں لکھی۔ اپنے والد ناصِر کاظمی ،جو ایک مشہور شاعر تھے، اور اُن کے دوستوں کی حوصلہ افزائی مجھے تحریک دیتی رہی۔ میں اُس وقت سے باقاعدگی کے ساتھ شاعری کر رہا ہوں۔ کالج کے نصاب میں شامل بالخصوص شیکسپئر، اِبسن اور شاء کے ڈراموں نے میرے سامنے ایک نیا جہان وا کر دیا۔ اِس ہیئت سے مسحور ہو کر مجھے ڈرامے لکھنے کی تحریک ہوئی۔ میں کھیلوں کا ایک پُرجوش شیدائی بھی تھا اور شطرنج، کرکٹ اور بیڈمنٹن کھیلتا تھا۔ مجھے شطرنج ایک کھیل سے کچھ زیادہ دکھائی دیتی تھی۔
میرے اندر کا مصنف باہر کی دنیا کا مشاہدہ کرتا رہا اور اس سے متاثر ہوتا رہا۔ پاکستان میں، جہاں میں رہتا تھا، اقتدارکی سیاست، دولت کا چند ہاتھوں میں ارتکاز، طبقاتی کشمکش، بد عنوانی، استحصال، اقربا پروری اور خواتین کے ساتھ امتیازی سلوک؛ یہ سب ایک بڑی بساط پہ ہوتا نظر آرہا تھا۔ اُس دور کی فکشن، فلموں اور ٹی وی ڈراموں کا موضوع، ہمیشہ کی طرح، بالعموم محبت، دوستی اور موزوں شریکِ حیات کا انتخاب تھا۔ میرے اندر کے لکھاری اور شطرنج کے کھلاڑی نے کچھ نئی نیاتخلیق کرنے کے لیے ہاتھ ملا لیے۔میرا طویل ڈرامہ ’بساط‘ اس کا ثمر تھا۔
میں نے اپنا ڈرامہ سٹیج کیے جانے سے پہلے شائع کرانے کا فیصلہ کیا کیونکہ میں نے ہمیشہ ڈرامے کو بنیادی طور پہ پڑھنے والی چیز سمجھا تھا۔ ملک کی سیاسی صورتِ حال اور تھیٹر کی زبوں حالی نے میرے فیصلے کو تقویت دی۔ ٹیلیویژن، جس کا آغاز 1964میں ہوا تھا، تفریح کا مقبول ترین ذریعہ بن چکا تھا۔ فنون کے لیے دستیاب وسائل، تقریباً تمام کے تمام، اُس واحد ٹی وی چینل کے لیے مختص کر دیے جاتے تھے جو حکومت کے زیرِ نگرانی چلایا جاتا تھا۔ 1958 سے ملک پہ حاکم فوجی آمریت نے کڑی سنسرشپ کی پالیسی نافذ کر رکھی تھی۔ 1972سے 1977کے دوران میں قائم ہونے والی جمہوری حکومت بھی صورتِ حال میں بہتری نہ لائی۔
’بساط‘ 1987میں میرے تعارف ’سٹیج یا کتاب‘ کے ساتھ شائع ہوا۔ میں نے اس مختصر پیش لفط میں پُرزور وضاحت کی کہ میں نے کتاب پر تھیٹر کو کیوں ترجیح دی تھی۔ مجھے خوشی ہوئی، اور کچھ حیرت بھی، کہ میری کتاب کی بہت پذیرائی ہوئی۔ متعدد موافق تبصرے اخبارات اور ادبی رسائل میں شائع ہوئے۔ ’ذہن کے تھیٹر‘ کا نظریہ، جس پر میں بعد میں بات کروں گا، بہت سے ادیبوں اور فنون سے وابستہ افراد نے پسند کیا۔

میںآج بھی ڈرامے کو ناول، کہانی یا شاعری کی طرح پڑھی جانے والی ایک صنفِ ادب سمجھتا ہوں۔ جس طرح ناول یا کہانی کو فلمایا جا سکتا ہے، شاعری کو گایا جا سکتا ہے، اسی طرح ڈرامے کو سٹیج پر پیش کیا جا سکتا ہے، فلمایا بھی جا سکتا ہے۔ لیکن یہ پیشکش ادب کے ساتھ دوسرے فنونِ لطیفہ مثلاً موسیقی، ڈیزائن، اداکاری وغیرہ کے اشتراک سے وجود میں آئے گی۔ جب کوئی ڈرامہ سٹیج یا ٹیلیویژن پر پیش کیا جا رہا ہوتا ہے تو اُسے ’میرا ڈرامہ‘ کہنے کا جتنا حق اُس کے مصنف کو ہوتا ہے اتنا ہی اُس کے ہدایت کار اور اداکاروں کو بھی ہوتا ہے۔ میں نے ایک ہدایت کار کو یہ کہتے سنا ہے۔ ’’مصنف کی کیا اہمیت ہوتی ہے؟ سکرپٹ کیا ہوتا ہے؟ میں دو جملوں سے دو گھنٹے کا ڈرامہ بنا سکتا ہوں۔‘‘ اداکار اصرارکرتیہیں کہ لوگ تو اُنہیں دیکھنے کے لیے آتے ہیں یا ٹیلیویژن کھولتے ہیں۔ وہ ’ہدایت کاری‘ سیٹ اور موسیقی کے بغیر گذارا کر سکتے ہیں۔ وہ محض چلتے پھرتے رہیں، ایک دوسرے کو دیکھتے رہیں، مسکراتے رہیں، تو بھی لوگ مسرور بیٹھے رہیں گے۔ کوئی مکالمے نہ ہوں، وہ محض ایک سے سو تک اور سو سے ایک تک گنتی گنتے رہیں، تو بھی کوئی فرق نہیں پڑے گا۔
یہ دعوے یقیناًانتہا پسندی کا رجحان ظاہر کرتے ہیں، لیکن اِن میں حقیقت کا عنصربھی ہے۔ جو ڈرامہ سٹیج یا ٹیلیویژن پر پیش کیا جاتا ہے وہ نہ تو ایک فن کار کا کام ہوتا ہے، نہ ہی ایک فن کا اظہار۔ وہ ایک ٹیم ورک ہے۔ کبھی ہدایت کار غالب آ جاتا ہے، کبھی اداکار چھا جاتے ہیں، کبھی مصنف اپنا لوہا منوا لیتا ہے اور کبھی سب کے سب بیک وقت اپنا آپ دکھاتے ہیں۔
چنانچہ کسی بھی مصنف کی طرح ڈرامے کے مصنف کے لیے بھی اصل کسوٹی کتاب ہے۔ بے شمار ایسے لوگ ملیں گے جو کبھی تھیٹر نہیں گئے لیکن معروف ڈرامہ نگاروں کے کے ڈراموں کی نہ صرف بات کرتے ہیں بلکہ اُن کے مکالمے اپنی گفتگو میں اشعار کی طرح استعمال کرتے ہیں۔ اِن ڈراموں سے اُن کا رشتہ کتاب ہی کے ذریعے استوار ہوا تھا۔ یہ اور بات ہے کہ کتاب پڑھتے وقت اُنہوں نے اپنے ذہن کا سٹیج روشن کیا تھا اور یہی ذہن کا سٹیج میرے خیال میں اصل سٹیج ہوتا ہے۔
کہا جائے گا کہ ہر شخص کتاب اپنے طریقے سے پڑھتا ہے۔ سو ایک کتاب کو سو قارئین سو مختلف طرح سے سمجھیں گے اور اُن میں سے اکثر کتاب کی وہ تشریح اور تعبیر کریں گے جو مصنف کے منشا کے بالکل برعکس ہو گی۔ اب دوسرے مصنفوں کے مقابلے میں ڈرامے کے مصنف کو یہ فوقیت حاصل ہے کہ وہ اپنے ڈرامے کو اِس طرح ’دِکھا‘ دے جس طرح وہ چاہتا ہے کہ لوگ وہ ڈرامہ دیکھیں (یعنی سمجھیں)۔ یہ بڑی حد تک درست ہے لیکن عام مشاہدے میں آیا ہے کہ تھیٹر دیکھ کر نکلنے والے کسی بھی دو افراد نے ایک ہی ڈرامے کو ایک طرح نہیں ’دیکھا‘ ہوتا۔ تھیٹر کا سٹیج ہر ناظر پر مختلف اثر چھوڑتا ہے، یعنی سو افراد ایک ہی وقت میں ایک نہیں بلکہ سو مختلف ڈرامے دیکھ رہے ہوتے ہیں۔ اِس کے علاوہ مصنف اور ہدایت کار ڈرامے کو کتنا ہی سکرپٹ کے مطابق پیش کرنے کی کوشش کریں، فرق آ ہی جاتا ہے۔ مصنف، ہدایت کار اور اداکاروں کی شخصیتوں کی ایک اپنی پابندی (binding) ہوتی ہے۔ جب ہم ڈرامہ کتاب میں پڑھ رہے ہوتے ہیں تو ہمارا تخیل بلا روک ٹوک کہیں کا کہیں جا سکتا ہے۔ لیکن سٹیج پر اداکار کی ذات بہت سے امکانات کو ختم کر دیتی ہے۔ تاریخی اور اچھوتے کرداروں کے ضمن میں یہ بات اور بھی زیادہ صحیح ثابت ہوتی ہے۔ پھر ایک اور بات بھی ہے۔ تھیٹر کا سٹیج کتنا ہی حقیقت کے قریب کیوں نہ ہو، ناظرین کتنا ہی ’کھو‘ کیوں نہ جائیں، وہ یہ کبھی نہیں بھولتے کہ وہ تھیٹر میں ہیں اور اُن کے سامنے جو کچھ ہو رہا ہے سٹیج پر ہو رہا ہے۔ لہٰذا اُنہیں اپنے ذہن کا سٹیج روشن کرنا پڑتا ہے اور اپنے سامنے پیش ہونے والے ڈرامے کو اُس سٹیج پر منتقل کر کے دیکھنا پڑتا ہے۔ چنانچہ بات وہیں آ جاتی ہے۔ تھیٹر میں بھی ڈرامہ ایسے ہی دیکھا جاتا ہے جیسے کتاب پڑھتے وقت۔
یہ بھی کہا جائے گا کہ ڈرامہ کا لغوی اور قدیمی معنی ’کر کے دکھانا‘ ہے۔ مگر عجیب بات ہے کہ جس زمانے کی یہ بات ہے اُس زمانے کے ڈرامے میں’کر کے دکھانے‘ والا عنصر سب سے کم تھا۔ مقابلہ ڈرامے کے مصنفوں کے مابین ہوتا تھا اور بالعموم وہی اسے پیش کرتے تھے۔ سٹیج ایک پلیٹ فارم نما جگہ تھی جس پر اداکار نقاب پہن کر آتے اور مکالمے اس طرح ادا کرتے جیسے آج کل کوئی ایسا شاعر جو اپنے کلام کو بہت اچھی طرح سمجھتا ہو، اُسے کسی مشاعرے میں سنائے۔ سٹیج کے آگے کوئی پردہ نہیں ہوتا تھااور پس منظر منقش مناظر کے ذریعے ظاہر کیا جاتا تھا ،جسے اہم نہیں سمجھا جاتا تھا۔ اُس زمانے کا نمائندہ نقاد ارسطو کہتا ہے:
منظر، دلکش ہونے کے کے باوجود (ڈرامے کے) تمام حصوں میں سب سے کم فنکارانہ ہوتا ہے، اور فنِ شاعری سے ذرا بھی سروکار نہیں رکھتا۔ المیے کا اثر سٹیج پر پیش کش اور اداکاروں کے بغیر بھی ممکن ہے؛ اور اس کے علاوہ، منظر کی سجاوٹ شاعر سے زیادہ پوشاک ساز کا کام ہے۔

قدیم ڈرامے میں نسوانی کردار عورتوں کی بجائے نو عمر لڑکے ادا کرتے تھے۔ سولہویں صدی میں الز بتھ عہد کا تھیٹر اور سترھویں صدی کایورپی تھیٹر ، یونانی سٹیج سے کچھ زیادہ مختلف نہیں تھے؛ اگرچہ ڈرامہ نگاری کا فن اپنے عروج پر پہنچ چکا تھا۔ ان ادوار کے ڈرامے سٹیج پر لا تعداد مرتبہ پیش کیے گئے اور اب بھی پیش کیے جاتے ہیں، لیکن وہ موجود صرف کتابوں میں ہیں۔
اِن باتوں سے میرا یہ مطلب نہیں کہ میں کوئی بڑا ڈرامہ نگار ہوں یا میں نے عظیم ڈرامے لکھے ہیں؛ میں صرف یہ کہنا چاہتا ہوں کہ میں اپنے ڈرامے شائع کرانے کو ترجیح دیتاہوں، بالکل اُسی طرح جیسے اپنی شاعری رسالوں میں چھپواتا ہوں۔